ہر درد پہن لینا ،

ہر درد پہن لینا ،
ہر خواب میں کھو جانا
کیا اپنی طبیعت ہے ،
ہر شخص کا ہو جانا
اک شہر بسا لینا 
بچھڑے ہوئے لوگوں کا
پھر شب کے جزیرے میں 
دل تھام کے سو جانا
موضوعِ سخن کچھ ہو ، 
تا دیر اسے تکنا
ہر لفظ پہ رک جانا ، 
ہر بات پہ کھو جانا
آنا تو بکھر جانا 
سانسوں میں مہک بن کر
جانا تو کلیجے میں 
کانٹے سے چبھو جانا
جاتے ہوئے چپ رہنا 
ان بولتی آنکھوں کا
خاموش تکلم سے 
پلکوں کو بھگو جانا
لفظوں میں اتر آنا 
ان پھول سے ہونٹوں کا
اک لمس کی خوشبو کا 
پوروں میں سمو جانا
ہر شام عزائم کے 
کچھ محل بنا لینا
ہر صبح ارادوں کی دہلیز پہ سو جانا.

1797444_10152260252453291_921351295_n

Posted on May 24, 2014, in Urdu Poems and tagged , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s