اشک آنکھوں میں چھپاتے ھوئے تھک جاتا ھوں


اشک آنکھوں میں چھپاتے ھوئے تھک جاتا ھوں
بوجھ پانی کا اٹھاتے ھوئے تھک جاتا ھوں

پاؤں رکھتے ھیں جو مجھ پر انہیں احساس نہیں
میں نشانات مٹاتے ھوئے تھک جاتا ھوں

برف ایسی کہ پگھلتی نہیں پانی بن کر
پیاس ایسی کہ بجھاتے ھوئے تھک جاتا ھوں

اچھی لگتی نہیں اس درجہ شناسائی
ہاتھ ہاتھوں سے ملاتے ھوئے تھک جاتا ھوں

غم گساری بھی عجب کار محبت ھے کہ میں
رونے والوں کو ہنساتے ھوئے تھک جاتا ھوں

اتنی قبریں نہ بناؤ میرے اندر محسن
میں چراغوں کو جلاتے ھوئے تھک جاتا ھوں

1511405_786389528052508_2123777208422618771_n

Posted on May 23, 2014, in MOshin Naqvi Poetry Collection, Urdu Poems and tagged , , , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s