خوب روکا شکایتوں سے مجھے

 

خوب روکا شکایتوں سے مجھے 
تونے مارا عنایتوں سے مجھے

بات قسمت کی ہے کہ لکھتے ہیں
خط وہ کن کن کنایتوں سے مجھے

واجب القتل اُس نے ٹھہرایا
آیتوں سے، روایتوں سے مجھے

حالِ “مہر و وفا” کہوں تو ، کہیں
نہیں شوق ان حکایتوں سے مجھے

کہہ دو اشکوں سے کیوں ہوکرتے کمی
شوق کم ہے کفایتوں سے مجھے

لے گئی عشق کی ہدایت ذوق
اُس سرے سب نہایتوں سے مجھے

386456_10150516382188291_228651713_n

Posted on January 8, 2014, in Uncategorized and tagged , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s