بگڑ کے مجھ سے وہ ميرے لئے اُداس بھي ہے

بگڑ کے مجھ سے وہ ميرے لئے اُداس بھي ہے
وہ زودِ رنج تو ہے، وہ وفا شناس بھي ہےتقاضے جِسم کے اپنے ہيں، دل کا مزاج اپنا
وہ مجھ سے دور بھي ہے، اور ميرے آس پاس بھي ہے

نہ جانے کون سے چشمے ہيں ماورائےِ بدن
کہ پا چکا ہوں جسے، مجھ کو اس کي پياس بھي ہے

وہ ايک پيکرِ محسوس، پھر بھي نا محسوس
ميرا يقين بھي ہے اور ميرا قياس بھي ہے

حسيں بہت ہيں مگر ميرا انتخاب ہے وہ
کہ اس کے حُسن پہ باطن کا انعکاس بھي ہے

نديم اُسي کا کرم ہے، کہ اس کے در سے ملا
وہ ايک دردِ مسلسل جو مجھ کو راس بھي ہے

احمد نديم قاسمي

403582_10150561242418291_494835374_n

Posted on January 8, 2014, in Uncategorized, Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s