اسے کہنا کہیں گھر بن گیا ہے

 

اسے کہنا کہیں گھر بن گیا ہے
کسی دیوار میں در بن گیا ہے
بدن پر تُہمتوں کی بارشیں ہیں
ہمیں تو عشق محشر بن گیا ہے
تُمہارے لب پہ اک حرفِ تسّلی
ہمارے دل پہ نشتر بن گیا ہے
کمالِ وردِ اسمِ آگہی ھے
کہ قطرہ بھی سمندر بن گیا ہے
زمیں پر چاندنی کا رقصِ مستی 
یہ کیسا شب کا منظر بن گیا ہے

390803_10150526019968291_685136113_n

Posted on January 8, 2014, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s