کب درد کے ماروں کو سکون ہوتا ہے محسن

کب درد کے ماروں کو سکون ہوتا ہے محسن
جب عشق نہیں ہوتا تو جنوں ہوتا ہے محسن
بے بس فقیروں سے نہیں پوچھتا کوئی محسن
کس طرح تمنائوں کا خون ہوتا ہے محسن
یہ عشق جو اپنا ہمیں ہونے نہیں دیتا
یہ عشق بھی ہوتا ہے تو کیوں ہوتا ہے محسن
ہر شام چراغوں کی طرح جلتی ہیں آنکھیں
کیا کوئی چلا جائے تو یوں ہوتا ہے محسن …؟؟؟

1488332_239330349579133_376208596_n

Posted on January 1, 2014, in MOshin Naqvi Poetry Collection and tagged , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s