اب تو یہ معیار سفر لگتا ہے

اب تو یہ معیار سفر لگتا ہے
کوئی صحرا بھی ہوگھر لگتا ہے

ہجر کی رات کے سناٹے میں
سانس لیتے ہوۓ ڈر لگتا ہے

شہر میں بے ہنری عام ہوئی
ہر کوئی اہل ہنر لگتا ہے

اپنی صورت سے ہے نفرت جس کو
وہ کوئی آئینہ گر لگتا ہے

نوک نیزہ پہ جو سج کر نکلا
وہ کسی خود دار کا سر لگتا ہے

جب بھی ٹوٹے یہ بکھرتا جائے
دل کسی کونج کا پر لگتا ہے

جو بھرے شہر میں شب کو نکلا
وہ کوئی اہل خبر لگتا ہے

جس نے اس شہر کی بنیاد رکھی
اب وہی شہر بدر لگتا ہے

اب کے دریا میں نہ اترو محسن
موج در موج بھنور لگتا ہے

1515003_582983155107651_1983025452_n

Posted on January 1, 2014, in MOshin Naqvi Poetry Collection, Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s