ہوائے تازہ میں پھر جسم و جاں فسانے کا

ہوائے تازہ میں پھر جسم و جاں فسانے کا
دریچہ کھولیں کہ ہے وقت اُس کے آنے کااثر ہوا نہیں اُس پر ابھی زمانے کا
یہ خواب زاد ہے کردار کِس فسانے کا

کبھی کبھی وہ ہمیں بے سبب بھی ملتا ہے
اثر ہُوا نہیں ہے اُس پر ابھی زمانے کا

ابھی میں ایک محاذِ دگر پہ اُلجھی ہوں
چُنا ہے وقت یہ کیا مجھ کو آزمانے کا

کُچھ اِس طرح کا پُر اسرار ہے تیرا لہجہ
کہ جیسے راز کُشا ہو کسی خزانے کا

1478971_565443873528246_794397469_n

Posted on December 30, 2013, in Dyar-e-Ishq, Urdu Poems and tagged , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s