خواب کے رنگ دل و جاں میں سجائے بھی گئے

خواب کے رنگ دل و جاں میں سجائے بھی گئے

پھر وہی رنگ بہ صد طور جلائے بھی گئے

انہیں شہروں کو شتابی سے لپیٹا بھی گیا

جو عجب شوق فراخی سے بچھائے بھی گئے

بزمِ شوق کا کسی کی کہیں کیاحال جہاں

دل جلائے بھی گئے اور بجھائے بھی گئے

پشت مٹی سے لگی جس میں ہماری لوگو !

اُسی دنگل میں ہمیں داؤ سِکھائے بھی گئے

یادِ ایام کہ اک محفلِ جاں تھی کہ جہاں

ہاتھ کھینچے بھی گئے اور مِلائے بھی گئے

ہم کہ جس شہر میں تھے سوگ نشینِ احوال

روز اس شہر میں ہم دھوم مچائے بھی گئے

یاد مت رکھیو رُوداد ہماری ہرگز

ہم تھے وہ تاج محلؔ جو ڈھائے بھی گئے

امجد اسلام امجد

1517540_574038982675447_1712999277_n

Posted on December 30, 2013, in Amjad Islam Amjad Poetry and tagged , , , . Bookmark the permalink. 1 Comment.

  1. Reblogged this on muuhammadzeeshaan and commented:

    خواب کے رنگ دل و جاں میں سجائے بھی گئے

    پھر وہی رنگ بہ صد طور جلائے بھی گئے

    انہیں شہروں کو شتابی سے لپیٹا بھی گیا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s