چشمِ بے خواب کو سامان بہت

چشمِ بے خواب کو سامان بہت
رات بھر شہر کی گلیوں میں ہوا
ہاتھ میں سنگ لیے
خوف سے زرد مکانوں کے دھڑکتے دل پر
دستکیں دیتی چلی جاتی ہے
روشنی بند کواڑوں سے نکلتے ہوئے گھبراتی ہے
ہر طرف چیخ سی لہراتی ہے
ہیں مرے دل کے لیے درد کے عنوان بہت
درد کا نام سماعت کے لیے راحتِ جاں
دستِ بے مایہ کو زر
نقطہِ خاموش کو لفظ
خوابِ بیدار کو مکاں
درد کا نام میرے ۔۔۔ شہرِ خواہش کا نشاں
منزلِ رگِ رواں
درد کی راہ پر تسکین کے امکان بہت
چشمِ بے خواب کو سامان بہت

امجد اسلام امجد

Posted on December 28, 2013, in Amjad Islam Amjad Poetry and tagged , , , . Bookmark the permalink. 1 Comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s