مَیں ہَزار بار چاہُوں کہ وہ مُسکُرا کے دَیکھے،

 

مَیں ہَزار بار چاہُوں کہ وہ مُسکُرا کے دَیکھے،
اُسے کَیا غَرض پَڑی ہے جَو نَظَر اُٹھا کے دَیکھے،
مَیرے دِل کا حَوصلہ تھا کہ ذَرا سی خاک اُڑا لی،
مَیرے بَعد اُس گَلی میں کَوئی اَور جا کے دَیکھے،
کَہِیں آسمان ٹُوٹا تَو قَدَم کَہاں رُکَیں گے،
جِسے خَواب دَیکھنا ہَو،وہ زَمِیں پہ آ کے دَیکھے،
اُسے کَیا خَبَر کہ کَیا ہے یہ شِکَستِ عَہد و پَیماں،
جَو فَرَیب دے رَہا ہے وہ فَرَیب کھا کے دَیکھے،
ہے عَجِیب کَشمکَش میں مَیری شَمَعِ آرزُو بھی،
مَیں جَلا جَلا کے دَیکُھوں،وہ بُجھا بُجھا کے دَیکھے،
اُسے دَیکھنے کَو قَیصَر مَیں نَظَر کَہاں سے لاؤں…؟
کہ وہ آئینہ بھی دَیکھے تَو چُھپا چُھپا کے دَیکھے

1468712_576053795800587_1073730131_n

Posted on December 27, 2013, in Lovely Sad Poetry, Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s