ہے دُعا ایسی ادا بنوں

 

ہے دُعا ایسی ادا بنوں، 
رُخِ یار پر ہی رہا کروں
کبھی پھول بن کے کِھلا کروں،
کبھی اشک بن کے ہنسا کروں

مری آرزو ہے فقط یہی،
تیرا گیت بن کے رہا کروں
تیرے دل سے نکلوں اگر کبھی،
تو تیرے لبوں پہ سجا کروں

میرا یہ وجود ہو کم سے کم،
کہیں ریت پر کسی نقش سا
تُو بنائے تو میں بنا کروں،
تُو مٹائے تو میں مِٹا کروں

کبھی سرد آہوں کا ہار ہوں،
کبھی آنسوؤں کی قطار ہوں
میں ہر ایک درد کا پیار ہوں،
غمِ یار تجھ سے گِلا کروں

میں تمام یاد کے موتیوں کو
رکھے ہوں آنکھوں کی قید میں
تیرا حکم مجھ کو ملے 
اگر تو میں قیدیوں میں رہا کروں

487632_10151159790943291_22323137_n

Posted on December 26, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s