چاہیے دنیا سے ہٹ کر سوچنا

 

چاہیے دنیا سے ہٹ کر سوچنا 
دیکھنا صحرا، سمندر سوچنا 
مار ڈالے گا ہمیں اس شہر میں 
گھر کی تنہائی پہ اکثر سوچنا 
دشمنی کرناہے اپنے آپ سے 
آئینہ خانے میں پتھر سوچنا 
چاندنی، میں، تو، کنار آب جو 
بند آنکھوں سے یہ منظر سوچنا 
چند تشبیہیں سجانے کے لیے 
مدتوں اس کے بدن پر سوچنا 
ایک پل ملنا کسی سے اور پھر 
اہل فن کا زندگی بھر سوچنا 
چاند ہے یا اس کی پیکر کے خطوط 
جھیل کی تہ میں اتر کر سوچنا 
رفعت دار و عروج بام کو 
دوستو نوک سناں پر سوچنا 
جاگتے رستوں میں کیا کچھ کھو گیا 
اوڑھ کر خواباں کی چادر سوچنا 
خشک پتوں کی طرح محسن کبھی 
تم بھی صحرا میں بکھر کر سوچنا

599966_10151257477428291_1731642594_n

Posted on December 26, 2013, in MOshin Naqvi Poetry Collection, Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s