فریبِ ذات سے نکلو جہاں کے سانحے دیکھو

 

فریبِ ذات سے نکلو جہاں کے سانحے دیکھو 
حقیقت منکشف ہو گی کبھی تو آئینے دیکھو
وہی اک اجنبی جس سے تعلّق سرسری سا تھا
ہمارے دل میں ہوتے ہیں اسی کے تذکرے دیکھو
لکھا ہے وقت نے یہ بھی عجیب اپنے مقدر میں
پلٹنا ہے نہیں جس کو اسی کے راستے دیکھو
ہمیں سمجھو نہ خوش اتنا لبوں کی مسکراہٹ سے
ہماری آنکھ میں پھیلے ہزاروں حادثے دیکھو
تھکے ہارے سے بیٹھے تھے مگر تیری صدا سن کر
شکستہ پا چلے آے ہمارے حوصلے دیکھو

 
304771_10151042771823291_1250834868_n

Posted on December 26, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. 1 Comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s