دن ٹھہر جائے مگر رات کٹے

دن ٹھہر جائے مگر رات کٹے 
کوئی صورت ہو کہ برسات کٹے خوشبوئیں مجھ کو قلم کرتی گئیں 
شاخ در شاخ میرے ہات کٹے

موجئے گل ہے کہ تلوار کوئی 
درمیاں سے ہی مناجات کٹے 

حرف کیوں اپنے گنوائیں جا کر 
بات سے پہلے جہاں بات کٹے 

چاند! آ مل کہ منائیں یہ شب 
آج کی رات تیرے ساتھ کٹے

پورے انسانوں میں گھس آئے ہیں 
سر کٹے ، جسم کٹے ، ذات کٹے ۔

پروین شاکر

555638_10151058177358291_647665532_n

Posted on December 26, 2013, in Parveen Shakir Poetry, Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s