جو دل پے گذرتی ہے رقم کرتے رہیں گے

جو دل پے گذرتی ہے رقم کرتے رہیں گے
اسبابِ غم عشق بہم کرتے رہیں گے
ویرانی دوراں پہ کرم کرتے رہیں گے
ہاں تلخی ایام ابھی اور بڑہے گی
ہاں اہل ستم مشق ستم کرتے رہیں گے
منظور یہ تلخی یہ سِتم ہم کو گوارا
دم ہے تو مدوائے الم کرتے رہیں گے
مے خانہ سلامت ہے تو ہم سرخی مے سے
تزئین در و بام حرم کرتے رہیں گے
باقی ہے لہو دل میں تو ہرا شک سے پیدا
رنگِ لب و رخسار صنم کرتے رہیں گے
اِک طرزِ تغافل ہے سو وہ ان کو مبارک
اِک عرضِ تمنا ہے سو ہم کرتے رہیں گے

– فیض احمد فیض

534762_484579138232227_1007500443_n

Posted on December 26, 2013, in Faiz Ahmad Faiz POetry and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s