جب یاد کا البم کھولوں تو

 

جب یاد کا البم کھولوں تو
کچھ لوگ بہت یاد آتے ہیں

میں گزرے دنوں کا سوچوں تو
کچھ لوگ بہت یاد آتے ہیں

اب جانے کس نگری میں
سوئے پڑے ہیں برسوں سے
میں رات گئے تک جاگوں تو
کچھ لوگ بہت یاد آتے ہیں

کچھ باتیں تھیں پھولوں جیسی
کچھ خوشبو جیسے لہجے تھے
میں شہر چمن میں ٹہلوں تو
کچھ لوگ بہت یاد آتے ہیں

وہ پل بھر کی ناراضگیاں
اور مان بھی جانا پل بھر میں
اب خود سے جب بھی روٹھوں تو
کچھ لوگ بہت یاد آتے ہیں

260452_10151110871428291_1988100894_n

Posted on December 26, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s