میرے شہروں کو کس کی نظر لگ گئی

میرے شہروں کو کس کی نظر لگ گئی
میری گلیوں کی رونق کہاں کھوگئی
روشنی بجھ گئی، آگہی سوگئی
ہم تو نکلے تھے ہاتھوں میں سورج لئے
رات کیوں ہوگئی رات کیوں ہوگئی؟
طالبانِ سحر!
ہم سے کیوں روشنی نے یہ پردہ کیا
کیوں اندھیروں نے رستوں پہ سایہ کیا؟
آؤ سوچیں ذرا!
ہم بھی سوچیں ذرا، تم بھی سوچو ذرا
آگہی سے پرے، روشنی کے بنا
جتنے امکان ہیں، سارے مر جائیں گے
جو بھی تخلیق ہے، وہ بکھر جائے گی
زندگی اپنے چہرے سے ڈر جائے گی
طالبانِ سحر آؤ سوچیں ذرا، آؤ دیکھیں ذرا!
آرزو کے ستاروں سے دمکا ہوا
پرچمِ روشنی کس طرح پھٹ گیا!
کون سا موڑ ہم سے غلط کٹ گیا!
پھول رت میں خزاں کس طرح چھا گئی
بیج کیا بوگئی!
ہم تو نکلے تھے ہاتھوں میں سورج لئے
رات کیوں ہوگئی!امجد اسلام امجد

537982_10151414121013291_486975189_n

Posted on December 23, 2013, in Amjad Islam Amjad Poetry, Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s