موم سے کاش بنا ہوتا یہ پیکر میرا،

 

موم سے کاش بنا ہوتا یہ پیکر میرا،
ایک سا ہوتا یونہی باہر و اندر میرا.
یہ جو یخ بستگی رگ رگ میں بسی جاتی ہے،
برف کر دے نہ کہیں یہ دل مضطر میرا.
کب سے اس گردش دوراں پہ سفر جاری ہے ،
جانے کب کھویا، کہاں کھو گیا محور میرا.
خون سے سینچا جنہیں پلکوں سے ہموار کیا،
تھور اگلیں وہ زمینیں تو مقدّر میرا.
اک دعا باندھ کے بھیجا تھا افق پار اسے،
راہ بھولا تو نہیں ہو گا کبوتر میرا؟؟
روزِ محشر کوئی تو نام پہ میرے بھی اٹھے،
ہو کوئی میرا سکندر، کوئی حیدر میرا.
اس کے دامن میں یہی زرد سی سوغاتیں ہیں،
لے کے پت جھڑ پلٹ آتا ہے دسمبر میرا.

– نیلم ملک

550430_10151306242983291_801551303_n

 
 

 

Posted on December 23, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s