رات اس نے پوچھا تھا

 

رات اس نے پوچھا تھا 
تم کو کسی لگتی ہے 
چاندنی دسمبر کی 
بارشیں دسمبر کی 
میں نے کہنا چاہا تھا 
سال و ماہ کے بارے میں 
گفتگو کے کیا معنی 
چاہے کوئی منظر ہو 
دشت ہو ،سمندر ہو 
جون ہو ، دسمبر ہو 
دھڑکنوں کا ہر نغمہ 
منظروں پہ بھاری ہے 
ساتھ جب تمہارا ہو 
دل کو ایک سہارا ہو 
ایسا لگتا ہے جیسے 
ایک نشہ سا تاری ہے 
لیکن اس کی قربت میں 
کچھ نہیں کہا میں نے 
تکتی رہ گیی مجھ کو 
چاندنی دسمبر کی 
بارشیں دسمبر کی

543047_10151322731873291_223900313_n

Posted on December 23, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s