تیرا کیا بنے گا اے دل !

 

تیرا کیا بنے گا اے دل !
کسی خواب سے فروزاں 
کسی یاد میں سمٹ کر
کسی حُسن سے درخشاں 
کسی نام سے لپٹ کر
وہ جو منزلیں وفا کی 
مرے راستوں میں آئیں
وہ جو لذتیں طلب کی 
مرے شوق نے اُٹھائیں
اُنہیں اب میں جمع کر کے 
کبھی دھیان میں جو لاؤں
تو ہجومِ رنگ و بو میں 
کوئی راستہ نہ پاؤں
کہیں خوشبوؤں کی جھلمل 
کہیں خواہشوں کے ریلے
کہیں تتلیوں کے جمگھٹ 
کہیں جگنوؤں کے میلے
پہ یہ دلفریب منظر 
کہیں ٹھہرتا نہیں ہے
کوئی عکس بھی مسلسل 
سرِ آئینہ نہیں ہے
یہی چند ثانیے ہیں 
مری ہرخوشی کا حاصل
انہیں کس طرح سمیٹوں 
کہ سمے کا تیز دھارا
سرِ موجِ زندگانی ہے فنا کا استعارا
نہ کھُلے گرہ بھنور کی 
نہ ملے نشانِ ساحل
ترا کیا بنے گا اے دل! 
ترا کیا بنے گا اے دل

540522_10151397709693291_1874663263_n

Posted on December 23, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s