بہت تیز بارش ہے

 

بہت تیز بارش ہے
کھڑکی کی شیشوں سے
بوچھاڑ ٹکرا رہی ہے
اگر میز سے سب کتابیں ہٹا دوں
تو چائے کے برتن رکھے جا سکیں گے
یہ بارش بھی کیسی عجیب چیز ہے
یوں بیک وقت دل میں
خوشی اور ادسی کسی اور شے سے کہاں
تم جو آؤ تو کھڑکی سے
بارش کو اک ساتھ دیکھیں
ابھی تم جو آؤ تو میں تم سے پوچھوں
کہ دل میں خوشی اور اداسی. . . . . .
مگر جانتی ہوں
کہ تم کیا کہو گے
میری جان
اک چیز ہے تیز بارش سے بھی تند
جس سے بیک وقت ملتی ہے
دل کو خوشی اور اداسی
“محبت”!
مگر تم کہاں ہو؟
یہاں سے وہاں رابطے کا
کوئی وسیلہ بھی نہیں ہے
بہت تیز بارش ہے اور شام گہری ہوئی جارہی ہے
نجانے تم آؤ نہ آؤ
میں اب شمع دانوں میں شمعیں جلا دوں
کہ آنکھیں بجھا دوں….؟ ؟ ؟

72931_10151401890683291_110416035_n

Posted on December 23, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s