تاش کے گھر بنائے بیٹھی ہوں

 

تاش کے گھر بنائے بیٹھی ہوں
کانچ کے پر لگائے بیٹھی ہوں

رسمِ یاراں کو توڑنا ہوگا
حوصلے یوں بڑھائے بیٹھی ہوں

ہر طرف ڈھل رہے ہیں اندھیارے
دل کا دیپک جلائے بیٹھی ہوں

گھونسلے وہ پرند چھوڑ گئے
آس جن کی لگائے بیٹھی ہوں

یاد زنجیر بن نہ جائے کہیں
پاؤں اپنے اُٹھائے بیٹھی ہوں

میں ستارہ ہوں اس کی قسمت کا
آس اس کی لگائے بیٹھی ہوں

یہ دیا بھی کہیں نہ بجھ جائے
جو ہوا سے چھپائے بیٹھی ہوں

1472015_554344651324010_300562547_n

Posted on December 19, 2013, in Lovely Sad Poetry, Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s