کیسے چھوڑیں اُسے تنہائی پر

 

کیسے چھوڑیں اُسے تنہائی پر
حرف آتا ہے مسیحائی پر

اُس کی شہرت بھی توپھیلی ہر سُو
پیار آنے لگا رُسوائی پر

ٹھہرتی ہی نہیں آنکھیں ، جاناں !
تیری تصویر کی زیبائی پر

رشک آیا ہے بہت حُسن کو بھی
قامتِ عشق کی رعنائی پر

سطح سے دیکھ کے اندازے لگیں
آنکھ جاتی نہیں گہرائی پر

ذکر آئے گا جہاں بھونروں کا
بات ہوگی مرے ہرجائی پر

خود کو خوشبو کے حوالے کردیں
پُھول کی طرزپذیرائی پر

541555_10151458283783291_2105351579_n

 

Posted on December 18, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s