میں آڑے ترجھے خیال سوچوں

 

میں آڑے ترجھے خیال سوچوں
کہ بے ارادہ کتاب لکھوں
کوئی شناسہ غزل تراشوں
کہ اجنبی انتیساب لکھوں
گنوادوں ایک عمر کے زمانے
کہ ایک پل کا حساب لکھوں
میری طبعیت پر منحصر ہے
میں جس طرح کا نساب لکھوں
عذاب سوچوں ، ثواب لکھوں
طویل تر ہے سفر تمہیں کیا
میں جی رہا ہوں تمہیں کیا
مگر تمہیں کیا کہ تم تو کب سے
میرے ارادے گنوا چکی ہو
جلا کر سارے حرف اپنے
میری دُعائیں جلا چکی ہو
میں رات اُڑوں کہ صبح پہنوں
تم اپنی رسمیں اُٹھا چکی ہو
سُنا ہے تُم سب کچھ بھلا چکی ہو
تو اب میرے دل پہ جبر کیسا
یہ دل تو حد سے گذر چکا ہے
گذر چکا ہے مگر تمہیں کیا
خزاں کا موسم ٹہر چکا ہے
مگر تمہیں کیا اس خزاں میں
میں جس طرح کا خواب لکھوں

1002351_10151750508933291_1505790662_n

Posted on December 18, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s