دیکھو مجھ سے پیار نہ کرنا

 

دیکھو مجھ سے پیار نہ کرنا
——————————
کسی بھی لمحے، کوئی بھی دھیان میں آ سکتا ہے
کسی کی باتیں، کسی کا چہرہ
کسی کا دھیما دھیما لہجہ
کوئی بھی اپنا یا بیگانہ
سوچے بنا، بس بے دھیانی میں
نا دانستہ
ادھر ادھر کی باتیں کرتے، یک دم دل کو بھا سکتا ہے
ہوں کتنے مضبوط ارادے
چاہت سے بچ کر چلنے کے
لاکھ یہ خواہش من میں جاگے
دل کے در پر جو دستک دیں، ان ہاتھوں کو
مایوسی کی دیمک چاٹے
پھر بھی ایسا ہو سکتا ہے
بھیڑ میں بیٹھے بیٹھے کوئی
خود کو یک دم کھو سکتا ہے
لیکن جاناں!
پھولوں جیسے تم لگتے ہو
کانٹوں سے بیوپار نہ کرنا
دیکھو، مجھ سے پیار نہ کرنا

(فاخرہ بتول)

1512353_714957551862373_1179297191_n

Posted on December 18, 2013, in Lovely Sad Poetry and tagged , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s