درقفس سے پرے جب بھی صبا گزرتی ہے

 

درقفس سے پرے جب بھی صبا گزرتی ہے
کسے خبر کہ اسیروں پہ کیا گزرتی ہے
تعلقات اس قدر نہ ٹوٹے تھے 
کہ تیری یاد بھی دل سے خفا گزرتی ہے
وہ اب ملے بھی تو ملنا اس طرح جیسے
بجھے چراغ کو چھو کر جسیے ہوا گزرتی ہے 
یہ اہل ہجر کی بستی ہے زرا احتیاط سے چل 
مصیبتوں کی یہاں انتہا گزرتی ہے 
نہ پوچھ اپنی انا کی بغاوتیں محسن
درقبولیت سے بچ کے دعا گزرتی ہے

محسن نقوی

59261_10151541166593291_1652471541_n

 

Posted on December 18, 2013, in MOshin Naqvi Poetry Collection, Urdu Poems and tagged , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s