بات یہ تیرے سِوا اور بھلا کس سے کریں

بات یہ تیرے سِوا اور بھلا کس سے کریں
تُو جفا کار ہوا ہے، تو وفا کس سے کریں
آئینہ سامنے رکھیں تو نظر تُو آئے
تُجھ سے جو بات چُھپانی ہو کہا کس سے کریں
زُلف سے، چشم و لب و رُخ سے کہ تیرے غم سے
بات یہ ہے کہ دِل و جاں کو رہا کس سے کریں
تُو نہیں ہے تو پھر اے حُسنِ سخن ساز! بتا
اِس بھرے شہر میں ہم جیسے مِلا کس سے کریں
ہاتھ اُلجھے ہوئے ریشم میں پھنسا بیٹھے ہیں
اب بتا!
کون سے دھاگے کو جُدا کس سے کریں
تُو نے تو اپنی سی کرنی تھی، سو کر لی خاورؔ
مسئلہ یہ ہے کہ ہم اِس کا گِلہ کس سے کریں– ایوب خاورؔ

1452031_10151969370708291_679163547_n

Posted on December 18, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s