اس بھرے شہر میں میری طرح رسوا ہوتا

 

اس بھرے شہر میں میری طرح رسوا ہوتا 
تجھ پہ حادثۂ شوق جو گزرا ہوتا 

تو نے ہر چند زباں پر تو بٹھائے پہرے 
بات جب تھی کہ مری سوچ کو بدلا ہوتا 

رکھ لیا غم بھی ترا بار امانت کی طرح 
کون اس شہر کے بازار میں رسوا ہوتا 

جب بھی برسا ہے ترے شہر کی جانب برسا 
کوئی بادل تو سر دشت بھی برسا ہوتا 

آئینہ خانے میں اک عمر رہے محو خیال 
اپنے اندر سے نکل کر کبھی دیکھا ہوتا 

میری کشتی کو بھلا موج ڈبو سکتی تھی 
میں اگر خود نہ شریک کف دریا ہوتا 

تجھ پہ کھل جاتی مری روح کی تنہائی بھی 
میری آنکھوں میں کبھی جھانک کے دیکھا ہوتا

603983_10151539516503291_839861424_n

Posted on December 18, 2013, in Urdu Poems and tagged , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s