میری ہی صدا لوٹ کے آئی ہے مُجھی تک

 

میری ہی صدا لوٹ کے آئی ہے مُجھی تک
شاید حدِ افلاک کے اُس پار بھی مَیں تھا

منزل پہ جو پہنچا ہُوں تو معلوم ہُوا ہے
خود اپنے لیے راہ کی دیوار بھی مَیں تھا

اب میرے تعارف سے گریزاں ہے تُو لیکن
کل تک تیری پہچان کی معیار بھی مَیں تھا

دیکھا تو مَیں افشا تھا ہر اِک ذہن پہ محسنؔ
سوچا تو پسِ پردۂ اسرار بھی مَیں تھا

31671_413849166904_1300081_n

Posted on December 17, 2013, in MOshin Naqvi Poetry Collection and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s