تو نہیں ، تیرا استعارہ نہیں‌

تو نہیں ، تیرا استعارہ نہیں‌
آسماں‌پر کوئی ستارہ نہیں‌

وہ نہیں‌ملتا ایک بار ہمیں‌
اور یہ زندگی دوبارہ نہیں‌

ہر سمندر کا ایک ساحل ہے
ہجر کی رات کا کنارہ نہیں‌

ہو سکے تو نگاہ کر لینا
تم پہ کچھ زور ہمارا نہیں

ناؤ الٹی تو یہ ہوا معلوم
زندگی موج ہے کنارا نہیں

وہ میرے سامنے سے گزرا تھا
پھر بھی میں‌ چپ رہا پکارا نہیں‌

امجد اسلام امجد

 
 

Posted on December 16, 2013, in Lovely Sad Poetry and tagged , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s