مرے ہم نفس، مرے ہم نوا،

مرے ہم نفس، مرے ہم نوا، 
مجھے دوست بن کے دغا نہ دے
میں ہوں دردِ عشق سے جاں بلب 
مجھے زندگی کی دُعا نہ دے
میں غمِ جہاں سے نڈھال ہوں 
کہ سراپا حزن و ملال ہوں
جو لکھے ہیں میرے نصیب میں 
وہ الم کسی کو خُدا نہ دے
نہ یہ زندگی مری زندگی، 
نہ یہ داستاں مری داستاں
میں خیال و وہم سے دور ہوں، 
مجھے آج کوئی صدا نہ دے
مرے گھر سے دور ہیں راحتیں، 
مجھے ڈھونڈتی ہیں مصیبتیں
مجھ خوف یہ کہ مرا پتہ 
کوئی گردشوں کو بتا نہ دے
مجھے چھوڑ دے مرے حال پر، 
ترا کیا بھروسہ اے چارہ گر
یہ تری نوازشِ مختصر ، 
مرا درد اور بڑھا نہ دے
مرا عزم اتنا بلند ہے 
کہ پرائے شعلوں کا ڈر نہیں
مجھے خوف آتشِ گُل سے ہے 
کہیں یہ چمن کو جلا نہ دے
درِ یار پہ بڑی دھوم ہے ، 
وہی عاشقوں کا ہجوم ہے
ابھی نیند آئی ہے حُسن کو 
کوئی شور کر کے جگا نہ دے
مرے داغِ دل سے ہے روشنی 
یہی روشنی مری زندگی
مجھے ڈر ہے اے مرے چارہ گر 
یہ چراغ تُو ہی بُجھا نہ دے
وہ اُٹھے ہیں لے کے خم و سبو، 
ارے اے شکیل کہاں ہے تُو
ترا جام لینے کو بزم میں ، 
کوئی اور ہاتھ بڑھا نہ دے

10168035_10152322716893291_791317080_n

About these ads

Posted on May 24, 2014, in Urdu Poems and tagged , , , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Follow

Get every new post delivered to your Inbox.

Join 3,007 other followers

%d bloggers like this: